بچوں کے نام کیسے ہونے چاہئیں؟

عرض : حضور! میرے بھتیجا پیدا ہوا ہے، اس کا کوئی تاریخی نام تجویز فرمادیں ۔

ارشاد :تاریخی نام سے کیا فائدہ ، نام وہ ہوں جن کے احادیث میں فضائل آئے ہیں ۔میرے اور بھائیوں کے جتنے لڑکے پیدا ہوئے میں نے سب کا نام محمد رکھا ،یہ اور بات ہے کہ یہی نام تاریخی بھی ہوجائے ۔ حامد رضاخاں کانام محمد ہے اور ان کی ولادت 1292ھ میں ہوئی اور اس نامِ مبارک کے عدد بھی بانوے ہیں ، ایک دِقت (یعنی دشواری)تاریخی نام میں یہ ہے کہ اسماء حُسنٰی سے ایک یا دو جن کے اعداد موافقِ عددِنامِ قاری (یعنی پڑھنے والے کے نام کے اعداد کے مطابق)ہوں عد دِ نام دو چند(یعنی دُگنے)کر کے پڑھے جاتے ہیں ۔ وہ قاری کو اسمِ اعظم کا فائدہ دیتے ہیں ،تاریخی نام سے مقداربہت زیادہ ہوجائے گی۔ (ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت مطبوعہ مکتبۃ المدینہ کراچی ص73)